225

کشمیری عوام کو اقوام متحدہ کی قرارداوں کے مطابق ان کا بنیادی حق دلانے تک جدو جہد جاری رکھنے کا عزم ،یورپی پارلیمنٹ میں مسئلہ کشمیر پر پارلیمنٹ میں آواز اُٹھانے کا فیصلہ ،

اولڈہم برطانیہ)اے ایف بی)
13جولائی 1931 کے شہداء کی قربانیاں رنگ لا رہی ہیں کشمیریوں نے اپنے مقدس خون سے 87سال قبل جس جدو جہد کا آغاز کیا تھا وہ کشمیریون کی بے پناہ قربانیوں نے نتیجہ میں کامیابی کی منزل کے قریب ہے ۔ کشمیری عوام کو اقوام متحدہ کی قرارداوں کے مطابق ان کا بنیادی حق دلانے تک جدو جہد جاری رکھی جائے گی۔ یورپی پارلیمنٹ میں انسانی حقوق کی کمیٹی نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر مکمل ہیئرنگ ستمبر 2018 کے بعد کرے گی۔ان خیالات کا ان خیالات کا اظہار جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے ہفتہ شہدائے کشمیر کے سلسلہ میں منعقدہ تقریب میں برطانوی و یورپی ممبران پارلیمنٹ ، میئرز ،کونسلروں اور تحریک کے راہنمائوں نے شہدائے کشمیرکو شاندار الفاظ میں خراج عقید ت پیش کرتے ہوئے کیا۔تقریب اولڈھم کونسل کے چیمبر میں اولڈہم کے میئر کونسلر جاوید اقبال اور تحریک کے سیکرٹری جنرل محمد اعظم کی مشترکہ صدار ت میں ہوا۔ اس تقریب میں نارتھ ویسٹ کے یورپی ممبران پارلیمنٹ واجد خان ، شیڈو وزیر امیگریشن افضل خان (ایم پی )، شیڈو کمیونٹی وزیر جم میکمان (ایم پی )، میئر آف راچڈل کونسلر محمد زمان، ایکرنگٹن کے میئر کونسلر محمد ایوب، سٹاکپورٹ کے میئر کونسلر والٹر بریٹ ، میئر آف سلفورڈکونسلر رونی ولسن اور ٹرایفورڈ کے میئر کونسلر راب چلٹن ،نارتھ ویسٹ کے شہروں سے آئے ہوئے کونسلروں راجہ محمد عارف، راجہ آصف خان، کونسلر منصف داد، کونسلر شاہد مشتاق ، کونسلر نور داد عزیز، کونسلر عبدالغفار خان، کونسلر نازیہ رحمان، کونسلر شعیب اختر، کونسلر پیٹر ڈیوس، کونسلر طاہر رفیق، کونسلر کبیرالرحمان، کونسلر نویدہ خان، کونسلر عروج شاہ ، کونسلر ربنواز اکبر، کونسلر لورا ایونز، کونسلر عاصم رشید چیئرمین نارتھ ویسٹ کشمیری وپاکستانی کونسلرز فورم، سابق کونسلر محمد شریف، مسلم کانفرنس برطانیہ کے صدرچوہدری محمد بشیر رٹوی، مسلم لیگ آزاد کشمیر کے نائب صدرحاجی محمد یوسف بندوروی، برطانیہ کے سینئر نائب صدر راجہ محمد مقصود کاکڑوی، ظفر اقبال ایڈووکیٹ ، نوٹنگھم سے راجہ ساجد محمود، تحریکی راہنمائوں سردار عبدالرحمان خان، محمد بوٹا ہیری، امجد حسین مغل، روبینہ خان، شاہدہ خان، فرزانہ افضل، پامیلا اشرف ، عذرا قاضی ، یاسمین عالم جب کہ آشٹین سے تحریک کی راہنما نائلہ شریف کے علاوہ مختلف شہروں سے کونسلرز، سیاسی جماعتوں کے نمائندگان، سماجی تنظیموں اور این جی اوز کے عہدے داران کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔ یورپی پارلیمنٹ میں نارتھ ویسٹ سے لیبر رکن پارلیمنٹ واجد خان ایم ای پی نے اعلان کیا کہ یورپی پارلیمنٹ میں انسانی حقوق کی کمیٹی نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر مکمل ہیئرنگ ستمبر 2018 کے بعد کرنے کا اصولی فیصلہ کیا ہے۔ اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کی رپورٹ ، برطانوی پارلیمنٹ میں قائم کشمیر گروپ کی انکوائری اور اب یورپی پارلیمنٹ کی طرف سے ہیئرنگ Hearing جیسے اقدامات بیرون ممالک مقیم ریاست جموں و کشمیر کے باشندوں کی عملی کاوشوں کا نتیجہ ہیں۔ مقبوضہ کشمیر میں جاری تحریک آزادی اوروہاں کے عوام کی مسلسل قربانیوں کی یورپی ایوانوں او ر عالمی اداروں میں باز گشت ریاست جموں و کشمیر کے سنگین مسئلہ کی جانب اہم ترین پیش رفت ہے۔انہوں نے ریاست جموں وکشمیر کی آزادی کی تحریک کے دوران شہید ہونے والے تمام عظیم افراد کو خراج عقیدت پیش کیا گیا اور تحریکی راہنمائوں کو ہر سطح پر اپنی معاونت کی یقین دھانی کروائی۔ایم ای پی واجد خان نے کہا کہ انہوں نے اپنے انتخاب سے لے کر اب تک مسئلہ کشمیر اور کشمیر ی عوام پر ہونے والے مظالم کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کے لئے ہمیشہ سر فہرست رکھا ہوا ہے اور پارلیمنٹ کے علاوہ آزاد جموں و کشمیر ، پاکستان اور اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل اور واشنگٹن جا کر بھی کشمیریوں کے لئے آواز بلند کی ہے جس کے لئے جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے چیئرمین راجہ نجابت حسین اور ان کی پوری ٹیم نے میرے ساتھ مکمل معاونت کی ہے اور میں آج اپنے حلقے کے عوام کی موجودگی میں مقبوضہ کشمیر کے نہتے اور مظلوم عوام کو یہ خوشخبری دینا چاہتا ہوں کہ یوم شہدائے کشمیر کے اِس دن ہم نے یورپی پارلیمنٹ میں بھی ایک بڑی کامیابی حاصل کر لی ہے اور تاریخ میں پہلی بار یورپی پارلیمنٹ کی انسانی حقوق کمیٹی نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا نوٹس لے لیا ہے اور ستمبر کے اجلاس میں تاریخ مقرر کی جائے گی جس میں کشمیری نمائندوں کو مقبوضہ کشمیر سے مدعو کیا جائے گا ۔ امیگریشن کے شیڈو وزیر اور تحریک آزادی کشمیر میں عالمی سطح پر متحرک برطانوی ممبر پارلیمنٹ افضل خان (ایم پی )نے اپنے خطاب میں کہا کہ کشمیر ی شہداء کو خراج عقیدت پیش کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ آ پکے تمام شہروں اور حلقوں میں ممبران پارلیمنٹ تک اپنی آواز پہنچائی جائے اور یہ کام صرف راجہ نجابت حسین اور ان کی پوری ٹیم کا نہیں بلکہ بیرون ممالک بسنے والے ہر کشمیری، ہر پاکستانی اور ہر انسان دوست کی ذمہ داری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے گذشتہ دنوں وزیر اعظم برطانیہ اور وزیر خارجہ برطانیہ سے بھی پارلیمنٹ میں کنٹرول لائن پر فائرنگ اور مقبوضہ کشمیر میں حالیہ شہادتوں پر بھرپور احتجاج کیا اور ہر پلیٹ فارم پر کشمیریوں کی نمائندگی کا حق ادا کرتے رہیں گے۔ اولڈھم ویسٹ سے شیڈو کمیونٹی وزیر جم میکمان (ایم پی ) نے کہا کہ انہوں نے اپنے انتخاب کے موقع پر تحریکی عہدیداروں اور مقامی کمیونٹی سے وعدہ کیا تھا کہ وہ کشمیریوں کے حق خود ارادیت کے حصول کے لئے معاونت کریں گے اور وہ بھی آج شہدائے کشمیر کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اس عزم کا اعادہ کرتے ہیں کہ وہ بھی اگلے ہفتے پارلیمنٹ میں مسئلہ کشمیر پر پارلیمنٹ میں آواز اُٹھائیں گے ۔ جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹرنیشنل کے چیئرمین راجہ نجابت حسین نے ممبران پارلیمنٹ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے واجد خان کی یورپی پارلیمنٹ میں کامیاب مہم کو ریاستی عوام کے لئے تاریخی سنگ میل قرار دیا اور کہا کہ ہم نے ریاستی جموں وکشمیر کے عوام کے نکتہ نظر اور بھارتی مظالم کو عالمی ایوانوں اور سیاستدانوں کے علاوہ ہر مکتبہ فکر تک پہنچانے کا عزم کر رکھا ہے اور اگست کے پورے مہینے میں برطانیہ اور ستمبر میں یورپ کے ایوانوں میں مسئلہ کشمیر پر تیزی لائی جائے گی۔راجہ نجابت نے کہا کہ یورپی پارلیمنٹ کے علاوہ برطانوی پارلیمنٹ میں بھی اکتوبر میں بحث کو یقینی بنایاجائے گا جس کے لئے کشمیر گروپ کے عہدیدارتحریکی راہنمائوں کی معاونت کر رہے ہیں۔ تحریک کے سیکرٹری جنرل محمد اعظم نے حاضر کونسلروں سے اپیل کی کہ وہ اپنے اپنے ٹائون ہالوں میں کشمیر کے حوالے سے تحریکی اور سوشل تقریبات منعقد کر کے مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے میں ہماری معاونت کریں۔ تحریک کی برطانیہ کی چیئرپرسن کونسلر یاسمین ڈار نے اپنے خطاب میں کہا کہ تحریکی عہدیدار کشمیری عوام کے مشن کو لے کر خصوصا خواتین ،نوجوانوں اور پروفیشنلز کو متحرک کر رہے ہیں جس کی واضع مثال آج کی تقریب میں خواتین کی اکثریت کی موجودگی ہے۔ انہوں نے تمام ممبران پارلیمنٹ اور کونسلروں کا بھی تعاون کرنے پر شکریہ ادا کیا۔ اس موقع پر میزبان میئر اولڈہم کونسلر جاوید اقبال نے کہا کہ بے شک میری سرکاری پوزیشن غیر جانبدارانہ ہے مگر ایک کشمیری ہونے کی حیثیت سے میں بھی اپنے وطن کی آزادی کے لئے جدو جہد میں تحریکی عہدیداروں کی معاونت جاری رکھوں گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں